02:57 pm
آنکھوں کے گرد سیاہ حلقے

آنکھوں کے گرد سیاہ حلقے

02:57 pm

کہا جاتا ہے کہ آنکھیں روح کی عکاسی ہوتی ہیں،جو انسان کی زندگی کو موثر انداز میں منعکس کرنے کی صلاحیت رکھتی ہیں اور کسی کی پہلی نظر آپ کی آنکھوں کا ہی جائزہ لیتی ہے،اس لئے ان کی حفاظت اور دیکھ بحال نہایت ضروری سمجھی جاتی ہے۔یہی وجہ ہے کہ خواتین آنکھوں کی دلکشی اور خوب صورتی بڑھانے پر زیادہ توجہ دیتی ہیں۔ ماہرین چشم کے مطابق آنکھوں کے گرد موجود جلد انسان کے جسم کا سب سے حساس حصہ ہوتی ہے،اس لئے ان کی حفاظت اور بناؤ سنگار میں احتیاط ضروری ہے۔عام طور پر دیکھا گیا ہے کہ انسان جب بڑھاپے کی جانب گامزن ہوتا ہے،یعنی جوانی سے بڑھاپے کی طرف قدم بڑھاتا ہے تو اس کی جلد متاثر ہونے لگتی ہے،خاص طور پر چہرے کی دلکشی اور خوب صورتی میں نمایاں کمی واقع ہو جاتی ہے،کیونکہ ہماری آنکھوں کے گرد جھریاں ظاہر ہونے لگتی ہیں،جس سے چہرہ بدنما محسوس ہوتا ہے،لیکن بعض لوگوں میں آنکھوں کے گرد کالے بد نما دائرے کی شکل میں حلقے بھی نمودار ہونے سے چہرہ متاثر ہو جاتا ہے۔
آج کے دور میں لوگوں نے مختلف طرز زندگی اپنا لیا ہے،جس سے ان کی روز مرہ کی مصروفیات،ذہنی و جسمانی صحت،غذائی عادات اور رہن سہن میں نمایاں تبدیلی پیدا ہوئی ہے۔مصروفیت کے اس دور میں اب انسان اپنی ظاہری خوبصورتی اور دلکشی سے بھی غافل ہو گیا ہے۔یہی وجہ ہے کہ کم عمر لڑکیوں میں آنکھوں کی خوبصورتی برقرار رکھنے سے متعلق مسائل منظر عام پر آرہے ہیں،جن میں آنکھوں کے گرد نمودار ہونے والے سیاہ حلقے (Black Circles) سر فہرست ہیں۔ دراصل یہ حلقے ہماری جلد کے متاثر ہونے سے نمودار ہوتے ہیں۔جیسے جیسے انسان بڑھاپے کی جانب بڑھتا جاتا ہے،یعنی عمر کے ساتھ ساتھ انسان کی جلد خشک ہونے لگتی ہے تو آنکھوں کے نچلے حصے میں شریانیں زیادہ نمایاں طور پر ظاہر ہونے لگتی ہیں،جو آہستہ آہستہ سیاہ حلقوں کا سبب بنتی ہیں،لیکن اس کے علاوہ بھی بہت سی چیزیں ان حلقوں کا سبب بن سکتی ہیں،جن کا ذکر ذیل میں کیا جارہا ہے۔ وراثتی مسئلہ آنکھوں کے گرد سیاہ حلقوں کا نمودار ہونا وراثتی عمل بھی ہو سکتا ہے،یعنی وراثت میں ملنے والے کسی مورثے (جین) کی کمی یا زیادتی سے یہ خرابی پیدا ہونے کا واضح امکان ہوتا ہے اور اگر والدین میں سیاہ حلقوں کی شکایت ہو تو اولاد کے مبتلا ہونے کے امکانات بھی ہو سکتے ہیں۔ حساسیت ایسے لوگ جنھیں جلدی حساسیت(الرجی)کی شکایت ہو،ان کی آنکھوں کے گرد حلقے ظاہر ہو سکتے ہیں۔ آنکھوں کے گرد جلد کی حساسیت ،سوزش اور باربار رگڑنے سے جلد سخت ہو جاتی ہے اور آہستہ آہستہ سیاہ حلقے نمودار ہونے لگتے ہیں۔آنکھوں کے نیچے زیادہ تہیں بھی ان کی وجہ بن سکتی ہیں۔غذائی حساسیت سے متاثرہ افراد بھی ان حلقوں سے دو چار ہو سکتے ہیں۔ نیند کی کمی مکمل اور بھرپور نیند نہ لینے والے افراد کی آنکھوں کے گرد حلقے نمودار ہو جاتے ہیں اور نیند کی کمی آنکھوں کے نچلے حصے میں موجود رگوں کو زیادہ سیاہ اور نمایاں کر دیتی ہے۔ تھکاوٹ بہت زیادہ تھکاوٹ سے بھی آنکھیں فوری متاثر ہوتی ہیں۔مناسب آرام نہ لینے سے آنکھوں کے گرد جلد زرد اور بے رونق نظر آتی ہے۔ ہڈی کی ساخت بعض لوگوں کی آنکھ کی ہڈی ساخت اور بناوٹ کچھ ایسی ہوتی ہے کہ ان کی آنکھوں کے نیچے گہرے حلقے خود بخود ظاہر ہوجاتے ہیں،یعنی ان کی ہڈی باہر کو اُبھری ہوئی اور زیادہ نمایاں ہوتی ہے۔ غذا آنکھوں کے گرد سیاہ حلقوں کا اہم اور نمایاں سبب غیر متوازن غذاؤں کا کھانا بھی ہے۔ حمل اور ایام خواتین میں حمل اور ایام کے دوران بھی یہ حلقے واضح اور نمایاں نظر آنے لگتے ہیں۔علاوہ ازیں ہارمونوں کی تبدیلی کے عمل سے بھی یہ حلقے نمودار ہو سکتے ہیں۔ جلد کی رنگت جلد کی رنگت سے بھی یہ حلقے نمودار ہو سکتے ہیں۔ گندمی اور سانولی جلد کی نسبت سفید رنگت والے افراد میں ان حلقوں کے نمودار ہونے کے امکانات زیادہ ہوتے ہیں۔ دھوپ یا سورج کی تپش سورج کی تمازت یا دھوپ میں زیادہ دیر تک کام کرنے والے افراد بھی سیاہ حلقوں کا شکار ہوجاتے ہیں،اس لئے کہ اس کی وجہ سے ان کی جلد کی رنگت متاثر ہوتی ہے۔

تازہ ترین خبریں