02:04 pm
   سانحہ  مچھ  ۔  پس پردہ  مقاصد  

   سانحہ  مچھ  ۔  پس پردہ  مقاصد  

02:04 pm

 بلوچستان میں پے درپے دہشت گرد حملوں نے دشمن کے مذموم عزائم عیاں کر دئیے ہیں۔ مچھ میں کان کنوں کا وحشیانہ قتل اور ہرنائی میں ایف سی کی چوکی پر حملہ ایک ہی شیطانی سلسلے کی کڑیاں ہیں۔ یہ سلسلہ ملک بھر میں دراز ہوتا دکھائی دے رہا ہے۔ یہ اتٖفاق نہیں کہ ان دو بڑے حملوں کے درمیان مغربی سرحد پر افغانستان کی سرزمین سے مہمند میں ایف سی کی سرحدی چوکی پر حملہ کر کے ایک جوان کو شہید کیا گیا۔ انہی ایام میں ایل او سی پر بھارتی جارحیت کے نتیجے میں پاکستانی فوجی شہید ہوئے۔ پاکستان پر کئے گئے یہ تمام حملے ایک ہی دشمن کی شیطانی سوچ کا نتیجہ ہیں۔ مچھ سانحے پر پور ی قوم دل گرفتہ ہے۔
گیارہ محنت کش مزدوروں کا تعلق ہزارہ برادری سے ہونے کی وجہ سے حادثے پر مسلکی رنگ نمایاں ہوا۔ حملہ آوروں کی نیت بھی یہی تھی کہ اس حملے کے بعد فرقہ وارانہ کشیدگی کو ہوا دی جائے۔ بدقسمتی سے حکومتی ردعمل نے عوامی جذبات کو مشتعل کر کے دشمن کا کام آسان بنا دیا ۔ وزیراعظم کے علامتی تعزیتی دورے میں غیر ضروری تاخیر اور بھانت بھانت کے سیاسی ترجمانوں کی بے مقصد بیان بازی نے سارا معاملہ الجھائے رکھا۔ دوسری جانب مخصوص فرقہ ورانہ شناخت کی حامل تنظیموں کی جانب سے ملک گیر احتجاجی دھرنوں اور شہداء کی تدفین میں تاخیر کی بدولت تنائو کی فضا بنی رہی۔ حالات کا تقاضہ ہے کہ قومی سانحات پر یکجہتی کی روش اپنا کر مشترکہ موقف اختیار کیا جائے۔ دشمن اس تاک میں بیٹھا ہے کہ باہمی اختلافات کی چنگاریوں کو ہوا دے کر نفرت کی آگ بھڑکائی جائے۔ پی ڈی ایم کی قیادت نے اگرچہ تعزیتی دورے میں وزیر اعظم پر سبقت تو لی لیکن سوگواروں کے مجمع میں بھی حکومت پر روایتی طعن و تشنیع کر کے ماحول خراب کیا ۔ حزب اختلاف کی جانب سے بار بار وزیر اعظم کے دورے میں تاخیر کو بنیاد بنا کر تنقیدی اور طنزیہ بیانات جاری کئے جاتے رہے۔ اس پر مستزاد حکومت کا نہ رکنے والا ردعمل تھا جس نے سیاسی کشیدگی کو مزید بڑھاوا دیا۔ جب وزیر اعظم نے حزب اختلاف کے ایک مخصوص حلقے کو بلیک میلر کہا تو اس جملے کو غلط طریقے سے سوگواران پر منطبق کر دیا گیا۔ بہر کیف تدفین کے بعد سوگواران سے ملاقات کے موقع پر وزیر اعظم نے اس حساس معاملے پر وضاحت پیش کر کے ہزارہ برادری کی غلط فہمی تو دور کر دی تاہم حزب اختلاف کی تلملاہٹ اب بھی عروج پر ہے۔ دوسری جانب مسلم لیگ نون کی نائب صدر سابق وزیر اعظم کی صاحبزادی کا ایک ایسا ویڈیو کلپ سوشل میڈیا پر پھیلایا جاتا رہا جس میں وہ کسی نجی تقریب میں لوک فنکاروں کی گائیکی سے محظوظ ہو رہی تھیں۔ پروپیگنڈہ کرنے والوں نے یہ جھوٹا الزام عائد کیا کہ ہزارہ برادری سے تعزیت کے بعد سابق وزیر اعظم کی صاحبزادی اور نون لیگی قیادت کوئٹہ میں موسیقی سن رہے ہیں جبکہ حقیقت میں یہ ویڈیو پرانا تھا۔ صاف ظاہر ہے کہ سیاسی بغض کی بنیاد پر فریقین قومی سانحے کا لحاظ کئے بغیر کردار کشی کی مہم جاری رکھے ہوئے ہیں۔ سیاسی قیادت کی ذمہ داری بنتی ہے کہ اس غیر ذمہ دارانہ اور غیر اخلاقی روش کا خاتمہ کرنے کے لیے اپنے حامیوں کو واضح ہدایات جاری کریں۔ باہمی سیاسی چپقلش کے نتیجے میں دہشت گردی جیسے سنگین مسئلے پر توجہ مرکوز نہ کی جاسکی۔ ٹی وی ٹاک شوز میں بھی شوقیہ میزبانوں اور سیاسی جماعتوں کے خوش آمدی ترجمانوں کی کوتاہ اندیشی کی بدولت فروعی معاملات پر لایعنی مباحث جاری رہے۔ 
ضرورت اس امر کی ہے کہ دہشت گردی کے پیچھے کار فرما عناصر کی نشاندہی کی جائے اور بلوچستان میں اٹھنے والی تشدد کی نئی لہر کے اہداف کا تعین کیا جائے۔ سی پیک منصوبہ بھارت سمیت دیگر چین مخالف قوتوں کی آنکھوں میں کافی عرصے سے کھٹک رہا ہے۔ بلوچستان میں لسانی منافرت اور فرقہ وارانہ کشیدگی کی آگ بھڑکانے کا بنیادی مقصد یہی ہے کہ ایک جانب سی پیک پر پیش رفت روکی جائے تو دوسری جانب دنیا کو یہ تاثر بھی دیا جائے کہ بلوچستان دہشت گردی کی وجہ سے عالمی سرمایہ کاری کے لئے محفوظ نہیں۔ اس عالمی امریکی ایجنڈے کے علاوہ بھارت کے اپنے مذموم مقاصد بھی نظر انداز نہیں کئے جاسکتے۔ بلوچستان میں علیحدگی کی تحریک کا شوشا چھوڑ کر بھارت مقبوضہ کشمیر میں جاری تحریک حریت کے متوازی بیانیہ تشکیل دے کر سفارتی دبائو پاکستان کی جانب منتقل کرنا چاہتا ہے۔ افغانستان میں مذاکرات کا معاملہ پیچیدگی کا شکار ہے۔ گزشتہ برس فروری میں طالبان اور امریکہ کے مابین طے پانے والے معاہدے کے بعد سے افغانستان میں بدامنی اور تشدد عروج پر ہے ۔ افغانستان کی سرزمین پر آزادی سے سرگرم عمل دہشت گرد گروہوں نے کئی مرتبہ پاکستان میں بڑے حملے کئے ہیں۔ جس داعش نے مچھ میں کان کنوں کو شہید کیا اُس کی جڑیں افغانستان میں ہیں جہاں وہ متعدد بڑی واردتوں کی ذمہ داری قبول کرتی رہی ہے۔ موصولہ اطلاعات کے مطابق شہید ہونے والے کان کنوں میں سات یا آٹھ افغان شہری بھی شامل ہیں۔ بڑی تعداد میں افغان شہریوں کی بلاروک ٹوک پاکستان میں آمد بھی ایک بڑا چیلنج ہے جس کا سدباب کئے بغیر سرحد کے دونوں جانب دہشت گردی کا سلسلہ روکنا ممکن نہیں۔ افغانستان اور پاکستان کے معصوم شہری اور سیکورٹی فورسز جس دہشت گردی کا شکار بن رہے ہیں اُس کے پیچھے کار فرما بھارتی ہاتھ کے خلاف مشترکہ حکمت عملی اپنائے بغیر کوئی چارہ نہیں۔ سیاسی قائدین اگر حساس قومی معاملات پر سطحی بیان بازی سے اوپر اُٹھ کر کبھی کبھار ذمہ دارنہ موقف بھی اپنا لیا کریں تو ملکی استحکام کو تقویت ملے گی۔ 










 

تازہ ترین خبریں

وفاقی وزیر داخلہ سے گرینڈ ہیلتھ الائنس کے وفد کی اہم ملاقات

وفاقی وزیر داخلہ سے گرینڈ ہیلتھ الائنس کے وفد کی اہم ملاقات

وزیراعظم کی زیرصدارت حکومتی ترجمانوں کا اجلاس آج ہوگا

وزیراعظم کی زیرصدارت حکومتی ترجمانوں کا اجلاس آج ہوگا

 وہ وقت دور نہیں جب پاک فوج دنیا کی افواج میں سرفہرست ہوگی،فردوس عاشق اعوان

وہ وقت دور نہیں جب پاک فوج دنیا کی افواج میں سرفہرست ہوگی،فردوس عاشق اعوان

اپوزیشن کی انتشار پھیلانے کی کوشش کامیاب نہیں ہونے دینگے ،وزیراعلیٰ پنجاب

اپوزیشن کی انتشار پھیلانے کی کوشش کامیاب نہیں ہونے دینگے ،وزیراعلیٰ پنجاب

پاکستان کیخلاف بھارتی عزائم بے نقاب کرتے رہیں گے،وزیراعظم

پاکستان کیخلاف بھارتی عزائم بے نقاب کرتے رہیں گے،وزیراعظم

لاہور، طالبہ کی ہوسٹل کے کمرے میں مبینہ خودکشی

لاہور، طالبہ کی ہوسٹل کے کمرے میں مبینہ خودکشی

 ملک کے بیشتر حصوں میں سرد اور خشک رہے گا، محکمہ موسمیات

ملک کے بیشتر حصوں میں سرد اور خشک رہے گا، محکمہ موسمیات

حکومت کی طرف سے کورونا ویکسین فری لگے گی،نوشین حامد

حکومت کی طرف سے کورونا ویکسین فری لگے گی،نوشین حامد

بھارت پاکستان میں دہشت گردی کروارہا ہے،وزیرخارجہ

بھارت پاکستان میں دہشت گردی کروارہا ہے،وزیرخارجہ

ملک بھرمیں نویں سے بارہویں تک تدریسی عمل کا آغاز ہو گیا

ملک بھرمیں نویں سے بارہویں تک تدریسی عمل کا آغاز ہو گیا

 بجلی کی قیمت میں اضافے کی تیاریاں شروع

بجلی کی قیمت میں اضافے کی تیاریاں شروع

برطانیہ نے الطاف حسین جیسے آدمی کو پاکستان کے حوالے نہیں کیا

برطانیہ نے الطاف حسین جیسے آدمی کو پاکستان کے حوالے نہیں کیا

وزیرصحت سندھ نے تعلیمی ادارے کھولنےکی مخالفت کردی

وزیرصحت سندھ نے تعلیمی ادارے کھولنےکی مخالفت کردی

پاکستان پہلےسےکہہ رہاتھاپلوامہ حملہ ڈرامہ ہےبھارت نےگزشتہ 20سال سےدہشتگردی کاڈھونگ رچایاتھا،۔ معید یوسف 

پاکستان پہلےسےکہہ رہاتھاپلوامہ حملہ ڈرامہ ہےبھارت نےگزشتہ 20سال سےدہشتگردی کاڈھونگ رچایاتھا،۔ معید یوسف