02:52 pm
کوئٹہ: کا سانحہ اور وزیراعظم کا جہاز

کوئٹہ: کا سانحہ اور وزیراعظم کا جہاز

02:52 pm

٭کوئٹہ: وزیرداخلہ ناکام: تادم تحریر ہزارہ قبیلے کا دھرنا جاریO مَچھ سانجہ، مقتولین کے ورثاء کے لئے 25 لاکھ فی کس امدادO سعودی عرب قطر تعلقات بحال سرحدیں کھل گئیںOآج بنوں میں اپوزیشن کا مظاہرہ ہو گاO تعلیمی ادارے 18 جنوری سے کھلیں گے، 14 جنوری کو حتمی فیصلہ O کرونا، برطانیہ، مکمل لاک ڈائون، تعلیمی ادارے بندO پنجاب الیکشن کمیشن، پرچے آئوٹ کرنے کا سنگین سکینڈل، فی پرچہ آٹھ لاکھ روپے، متعدد گرفتار O پنجاب میں بارشیں، کراچی میں سردی بڑھ گئیO کروڑوں روپے کے 700 شکاری پرندوں ’شِکروں‘ کی سمگلنگ!O ’’مولانا حکم دیں، عوام کا سمندر اسلام آباد کی طرف موڑ دوں گی‘‘ مریم نوازO ٹرمپ: فوج کو حکم، ’’مجھے صدر برقرار رکھا جائے‘‘۔
٭کوئٹہ سے کچھ فاصلہ پر کوئلے کی کانوں پر وحشیانہ فائرنگ سے شہید کئے جانے والے گیارہ محنت کشوں کے لواحقین کا احتجاجی دھرنا تا دم تحریر جاری تھا۔ وفاقی وزیر داخلہ وزیراعظم کے طیارے میں کوئٹہ پہنچے، ہر شہید کان کن کے لواحقین کے لئے 25 لاکھ روپے امداد کا اعلان بھی کیا، دھرنے کے مظاہرین کے ایک کے سوا تمام مطالبات تسلیم کر لئے، البتہ بلوچستان کی حکومت کے استعفے کا مطالبہ منظور نہیں کیا۔ مظاہرین نے مطالبہ کیا کہ وزیراعظم عمران خاں خود آ کر بات کریں۔ ماضی میں ایسا ہوتا رہا ہے۔ مگر…مگر!! وزیرداخلہ نے زخموں پر نمک چھڑکنے والا بیان دیا کہ آپ لوگ اسلام آباد آ جائیں، وزیراعظم سے ملاقات کرائوں گا! ’’کیا یہ کم ہے کہ وزیراعظم نے اپنا طیارہ بھیجا ہے!!‘‘ کیسا سنگ دلانہ رویہ ہے! ماضی میں ایک ایسے واقعہ پر پیپلزپارٹی کے وزیراعظم (راجہ پرویز اشرف!) اور آرمی چیف فوری طور پر کوئٹہ پہنچ کر مظاہرین کے درمیان زمین پر بیٹھ گئے تھے! اور موجودہ دَور! وزیراعظم کو شائد سرخاب کے پَر یا پائوں میں مہندی لگی ہوئی ہے، پشاور کے آرمی سکول جیسا اتنا ہولناک المیہ، اور وزیراعظم نے خود جانے کی بجائے اپنا ہوائی جہاز بھیج دیا!!
ممکن ہے کالم کی اشاعت تک کوئی نئی خبر آ چکی ہو۔ کوئلے کی سیاہ تاریک کانوں میں کام کرنے والے غریب کان کنوں کو جس بہیمانہ طریقے سے شہید کیا گیا اس پر ملک بھر میں شدید ردعمل ہو رہا ہے۔ مگر!… مگر! ایک مذہبی سیاسی جماعت کے ترجمان نے احتجاج کیا ہے کہ قاتلوں کی تلاش کے لئے چھاپے کیوں مارے جا رہے ہیں؟؟ کیا تبصرہ کیا جائے؟ یہ بات ثابت ہو چکی ہے کہ یہ سب کچھ بھارت کرا رہا ہے۔ اس کے ایجنٹ مختلف مذہبی گروپوں میں شامل ہو کر فرقہ واریت پھیلا رہے ہیں۔ بھارت کی مودی حکومت واضح الفاظ میں ایسی کارروائیوںکی دھمکیاں دے چکی ہے، بلوچستان کو خاص طور پر نشانہ بنایا جا رہا ہے جہاں افغانستان اور ایران سے بھارتی دہشت گرد بآسانی آتے جاتے رہتے ہیں۔ دِل نہائت دُکھی اور دماغ سُن ہے۔ مگر میں بھارت کو کیا کہوں؟ اپنوں کا رویہ کیا ہے؟ قوم، مذہب، فرقہ کوئی بھی ہو، اس کی جان و مال کا تحفظ کس کی ذمہ داری ہے؟؟
٭کسی ملک کی معیشت اور صنعتی و تجارتی کارروائیوں کی رفتار کا اندازہ اس کے سٹاک ایکس چینج کی صورت حال سے لگایا جاتا ہے۔ 100 انڈیکس کے معنی 100 سب سے بڑی کمپنیوں کے کاروبار کی تخصیص ہوتی ہے۔ موجودہ حکومت کے ابتدائی دور میں پاکستان کا سٹاک انڈیکس 29 ہزار تک گر گیا تھا مگر اب رفتہ رفتہ 44686 (منگل صبح 10 بجے) تک بلند ہو گیا ہے۔ یہ امر اس بات کی علامت ہے کہ ملک میں کاروبار میں تیزی آ رہی ہے، برآمدات بڑھ رہی ہیں اور ملک کے اندر صنعتی اور تجارتی سرگرمیاں اور روزگار کے مواقع بڑھ رہے ہیں۔ یہ سرگرمیاں اس حقیقت کے باوجود پھیل رہی ہیں کہ کرونا کے باعث ایک سال سے ہر قسم کا صنعتی، تعلیمی اور سماجی کاروبار بند پڑا ہے! اور حکومت کی نااہلیوں کے باعث قومی خزانے کو اربوں کھربوں کا نقصان پہنچ چکا ہے۔
٭برطانیہ کو کرونا کی بدترین صورت حال کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے! پورے ملک میں سخت ترین لاک ڈائون کے اعلان کے ساتھ تمام تعلیمی ادارے بند کر دیئے گئے ہیں۔ وزیراعظم بورس جانسن نے عوام کو ہدائت کی ہے کہ وہ گھروں سے باہر نہ نکلیں، اس وقت برطانیہ کو روزانہ آنے جانے والی دنیا بھر کی ہزاروں پروازیں اور ہوائی اڈے بند پڑے ہیں منگل کی صبح تک برطانیہ میں 407 مزید اموات ہو چکی تھیں، تقریباً 83 ہزار نئے مریض آ چکے تھے، اب تک اموات کی تعداد 76 ہزار تک پہنچ چکی ہے۔ ہر قسم کا کاروبار بند ہو چکا ہے۔ امریکہ میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد تین لاکھ 62 ہزار سے اوپر ہو گئی ہے۔ اس میں اضافہ ہوتا چلا جا رہا ہے! خدا کا شکر کہ پاکستان میں صورت حال قابو میں آ رہی ہے۔ ہلاکتوں کی تعداد تین دنوں میں89 سے کم ہو کر39 تک آ گئی ہے، نئے مریضوں کی تعداد بھی 3700 سے کم ہو کر 1900 تک ہو گئی ہے۔ خدا تعالیٰ ہمارا حامی و ناصر ہو!
٭سعودی عرب کو بالآخر انتہا پسندانہ غرور اور تکبر چھوڑنا پڑا اور تین سال کے بعد قطر کے ساتھ صلح کرنا پڑی ہے۔ سعودی عرب اور اس کے زیر سایہ دوسرے عرب ممالک نے تین سال تک تیل اور گیس کی دولت سے مالا مال قطر کا معاشی بائیکاٹ کیا اور اس کے ساتھ زمینی اور فضائی سرحدیںبند رکھیں مگر اس سے قطر کو کوئی فرق نہیں پڑا۔ اس کی کرنسی اب بھی سعودی کرنسی سے زیادہ مضبوط ہے۔ قطر کی معاشی حالت کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ یہ نہائت چھوٹا سا ملک ہے، صرف دو شہر ہیں۔ مگر اس کے معاشی اور سیاسی استحکام کا عالم یہ ہے کہ اس کی سرکاری، ’’قطر ایئر لائنز‘‘ کے پاس ہر قسم کے 222 بڑے بڑے مسافر طیارے ہیں۔ جو دنیا بھر میں ایک سو سے زیادہ ممالک کے ساتھ پروازوں کا سلسلہ قائم کئے ہوئے ہیں کرونا کے باعث تقریباً 25 ممالک کے ساتھ پروازوںکا سلسلہ رک گیا ہے اور چند بڑے طیاروں کی پروازیں روکنا پڑی ہیں، پھر بھی قطر ایئرلائنز کا شمار دنیا کی چند بڑی ایئر لائنز میں ہوتا ہے۔ دوسری طرف سعودی عرب کی معیشت بہت نیچے چلی گئی ہے۔ اس کے بائیکاٹ سے قطر کی معیشت پر کوئی فرق نہیں پڑا اور بالآخر قطر کے ساتھ تعلقات بحال کرنے پڑے ہیں جس کے سعودی عرب کے کٹڑ دشمن ایران کے ساتھ گہرے تعلقات قائم ہو چکے ہیں۔
٭قارئین کرام! چھوڑیں دوسروں کی باتیں۔ آیئے کچھ ہلکی پھلکی باتیں کرتے ہیں۔ ن لیگ پاکستان کے اس وقت صدر شہباز شریف ہیں۔ وہ جیل میں ہیں اور مریم نواز نے خود بخود ن لیگ کی صدارت سنبھال لی ہے۔ ان کی صرف ایک بات کا ذکر، مگر اس سے پہلے یہ کہ مسلم لیگ نے پاکستان بنایا تھا اور مولانا فضل الرحمان کے اکابرین نے پاکستان کے قیام کی سخت مخالفت کی تھی۔ اب مریم نواز نے مولانا فضل الرحمان کو ن لیگ کا سرپرست تسلیم کرتے ہوئے بلندو بانگ اعلان (بڑھک!) کیا ہے کہ ’’مولانا جب حکم دیں گے میں عوام کے سمندر کا رُخ اسلام آباد کی طرف موڑ دوں گی۔‘‘ اس پر کیا تبصرہ کیا جائے؟ مجھے ایک پرانا واقعہ یاد آ گیا ہے۔ میں لاہور کے موچی دروازے کے میدان میں ایک چھوٹی سی پارٹی کے جلسے میں موجود تھا۔ تقریباً 250 حاضرین، نماز کی صفوں کی شکل میں بیٹھے تھے۔ پارٹی کے صدر نے مائیک پر کہا کہ ’’ضیاء الحق، دیکھو! عوام کا ٹھاٹھیں مارتا ہوا یہ عظیم الشان سمندر!!!…‘‘
٭ایک بہت اہم بات!! ایک ٹرانسپورٹ کمپنی نے لاہور سے کمالیہ تک بس چلانے کا اعلان کیا ہے…کمپنی سے گزارش ہے کہ کسی طرح چند روزکے لئے سہی، لاہور سے تلہ گنگ تک ایک بس چلا دے، ایک عزیز بیٹی کافی عرصہ سے میرے لئے ساگ (مکھن والا) پکا کر بیٹھی ہے،  بھیجنا مشکل ہو رہا ہے!

ضص

تازہ ترین خبریں

فیصل واوڈا نااہل ہونے سے بچ گئے،عدالت سے بڑی خبر آ گئی

فیصل واوڈا نااہل ہونے سے بچ گئے،عدالت سے بڑی خبر آ گئی

پی سی بی کی کھلاڑیوں اور آفیشلز کو کورونا ویکسین لگانے کی پیشکش

پی سی بی کی کھلاڑیوں اور آفیشلز کو کورونا ویکسین لگانے کی پیشکش

غریدہ فاروقی پی ڈی ایم کی کامیابی پر خوشی سے نہال

غریدہ فاروقی پی ڈی ایم کی کامیابی پر خوشی سے نہال

سینیٹ انتخابات میں ہار ۔۔ عمران خان ایوان سےاعتمادکاووٹ لیں گے ۔ شاہ محمود قریشی

سینیٹ انتخابات میں ہار ۔۔ عمران خان ایوان سےاعتمادکاووٹ لیں گے ۔ شاہ محمود قریشی

سینٹ انتخابات میں پی ڈی ایم کے امیدواروں اور یوسف رضا گیلانی کی کامیابی پارلیمنٹ کا عمران نیازی پر عدم اعتماد ہے ۔ اسلم غوری

سینٹ انتخابات میں پی ڈی ایم کے امیدواروں اور یوسف رضا گیلانی کی کامیابی پارلیمنٹ کا عمران نیازی پر عدم اعتماد ہے ۔ اسلم غوری

میں خیبرپختونخواہ سے سینیٹ کا انتخاب ہار گیا ہوں، ہار جیت ہر جمہوری عمل کا حصہ ہوتی ہے اور مجھے کسی سے کوئی شکایت نہیں ہے۔فرحت اللہ بابر

میں خیبرپختونخواہ سے سینیٹ کا انتخاب ہار گیا ہوں، ہار جیت ہر جمہوری عمل کا حصہ ہوتی ہے اور مجھے کسی سے کوئی شکایت نہیں ہے۔فرحت اللہ بابر

سندھ اسمبلی میں بھی پیپلزپارٹی سینیٹ الیکشن میں کامیاب

سندھ اسمبلی میں بھی پیپلزپارٹی سینیٹ الیکشن میں کامیاب

عمران خان سے غداری۔۔یوسف رضاگیلانی کو 9اضافی ووٹ کس کس نے دیئے؟پتہ چل گیا۔۔؟ آج کی بڑی خبر

عمران خان سے غداری۔۔یوسف رضاگیلانی کو 9اضافی ووٹ کس کس نے دیئے؟پتہ چل گیا۔۔؟ آج کی بڑی خبر

پانچ ووٹوں سے یوسف رضاگیلانی کی کامیابی کم ہےان کیلئےمجھےزیادہ ووٹوں کی امیدتھی۔آصف علی زرداری

پانچ ووٹوں سے یوسف رضاگیلانی کی کامیابی کم ہےان کیلئےمجھےزیادہ ووٹوں کی امیدتھی۔آصف علی زرداری

پی ٹی آئی کیلئے بڑی خوشخبری ۔۔۔ کتنے امیدوار کامیاب ہوئے حیرت انگیز خبر سامنے آگئی

پی ٹی آئی کیلئے بڑی خوشخبری ۔۔۔ کتنے امیدوار کامیاب ہوئے حیرت انگیز خبر سامنے آگئی

سینیٹ انتخابات ۔۔۔یوسف رضا گیلانی کو حکومتی اتحاد جانب سے 9 ووٹ ملے

سینیٹ انتخابات ۔۔۔یوسف رضا گیلانی کو حکومتی اتحاد جانب سے 9 ووٹ ملے

عوام کا سینیٹ الیکشن سے مکمل لاتعلقی اور عدم دلچسپی کا اظہار

عوام کا سینیٹ الیکشن سے مکمل لاتعلقی اور عدم دلچسپی کا اظہار

عمران خان کو اپنی اسمبلی سے شکست دلوانا تاریخی کامیابی ہے۔ بلاول بھٹو

عمران خان کو اپنی اسمبلی سے شکست دلوانا تاریخی کامیابی ہے۔ بلاول بھٹو

کے پی کے میں اب تک 12میں سے پانچ نشستوں پر حکومت کی کامیابی

کے پی کے میں اب تک 12میں سے پانچ نشستوں پر حکومت کی کامیابی