اتوار‬‮   17   ‬‮نومبر‬‮   2019

گورنرخیبر اوروزیراعلی کا ایڈورڈز کالج کی سابقہ شناخت بحال رکھنے پر اتفاق

نیشنلائزیشن کے تحت کالج پراپرٹی کو منتقل نہیں کیاجارہا ، کالج عیسائی برادری کا ہی رہے گا
کالج کی تعلیمی شعبہ میں خدمات اورمعیار کوبحال رکھا جائے گا،شاہ فرمان کااجلاس سے خطاب
پشاور(بیورورپورٹ) گورنرخیبرپختونخواشاہ فرمان اوروزیراعلی خیبرپختونخوا محمودخان کی زیرصدارت ایڈورڈز کالج کی موجودہ صورتحال سے متعلق اعلی سطحی اجلاس گورنرہاؤس پشاورمیں منعقد ہوا ،جس میں سپریم کورٹ کی ہدایات کے مطابق قائم کئے گئے کمیشن کے سربراہ ڈاکٹرمحمدشعیب سڈل نے ہمراہ رکن قومی اسمبلی رمیش کمار نے خصوصی شرکت کی۔ اجلاس میں کمیشن کو عدالتی فیصلہ کی روشنی میں ایڈورڈز کالج کی موجودہ صورتحال اورحکومتی اقدامات سے متعلق تفصیلی بریفنگ دی گئی۔ اجلاس میں ایڈورڈز کالج سے متعلق مختلف امور پراتفاق رائے کیاگیا جن میں ایڈورڈز کالج کی سابقہ شناخت برقراررہے گی اور نیشنلائزیشن کے تحت کالج کی پراپرٹی کو کہیں منتقل نہیں کیاجارہاہے ،ایڈورڈز کالج عیسائی برادری کا ہے اوران کا ہی رہے گا۔ ایڈورڈزکالج کا پرنسپل ہمیشہ عیسائی برادری سے ہی ہوگا۔ اس موقع پر گورنرخیبرپختونخوا شاہ فرمان کاکہناتھاکہ ہمارامقصد ایڈورڈزکالج کی شان وشوکت اورتاریخی اہمیت کوبرقراررکھناہے اور اس کالج کی تعلیمی شعبہ میں خدمات اورمعیار کوبحال کرناہے۔ اجلاس میں سیکرٹری ہائرایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ منظور احمد، پرنسپل سیکرٹری برائے گورنرنظام الدین، پرنسپل سیکرٹری برائے وزیراعلی شہاب علی شاہ اوردیگرمتعلقہ حکام نے شرکت کی۔
گورنر، وزیراعلیٰ

© Copyright 2019. All right Reserved