بدھ‬‮   23   اکتوبر‬‮   2019

ایڈورڈز کالج کو حکومتی تحویل میں دینے کے خلاف درخواست خارج

اپیل کی بنیاد پر سٹے آرڈر نہیں دیاجاسکتا ، ایڈووکیٹ جنرل، محفوظ فیصلہ سنادیاگیا
پشاور ( بیورو رپورٹ ) پشاورہائی کورٹ نے تاریخی ایڈورڈز کالج کو حکومتی تحویل میں دینے کے فیصلے پرعملدرآمد روکنے کیلئے درخواست خارج کردی ، گزشتہ روز جسٹس قیصر رشید اور جسٹس عبدالشکورپر مشتمل دو رکنی بینچ نے کیس کی سماعت کے بعد فیصلہ محفوظ کرلیاتھا بشپ ہمفری سرفراز نے عدالتی فیصلے پر حکم امتناع کیلئے درخواست دائر کی تھی جس میں درخواست گزار کے وکیل نے موقف اختیار کیا کہ وہ ایڈورڈز کالج کو حکومتی تحویل میں دینے کے خلاف سپریم کورٹ جانا چاہتے ہیں لہذا کالج کو حکومتی تحویل میں دینے کے فیصلے پر سپریم کورٹ میں اپیل تک حکم امتناع جاری کیا جائے ، اس موقع پر ایڈوکیٹ جنرل شمائل بٹ عدالت میں پیش ہوئے، انہوں نے عدالت کو بتایا کہ اپیل کی بنیاد پر سٹے آرڈر نہیں دیاجاسکتا حکم امتناع کیوجہ سے عدالت عالیہ اپنے ہی احکامات معطل کرے گی انہوں نے بتایا کہ ہائی کورٹ نے ایڈورڈز کالج کو نجی ادارہ قراردینے اور کالج میں صوبائی حکومت کی مداخلت روکنے کی درخواست خارج کی ہے عدالت نے دلائل مکمل ہونے کے بعد فیصلہ محفوظ کرلیا تھااوربعدازاں فیصلہ سناتے ہوئے عدالتی احکامات پرعملدرآمد روکنے کے لئے دائردرخواست خارج کردی ۔
درخواست خارج

© Copyright 2019. All right Reserved