اتوار‬‮   17   ‬‮نومبر‬‮   2019

آزادکشمیر میں ایکٹ پاس ہونے کے باوجود فوڈ اتھارٹی قائم نہ ہوسکی


اداروں کی فوڈ اتھارٹی کے قیام میں رکاوٹیں ،مختلف قانونی پیچیدگیوں میں الجھادیا
نئے سیکرٹری خوراک سے وابستہ امیدیں دم توڑگئیں،اتھارٹی کوفعال کرنیکامطالبہ

مظفرآباد (نمائندہ خصوصی)حکومتی اداروں کی غفلت, آزادکشمیر میں ایکٹ پاس ہونے کے باوجود فوڈ اتھارٹی قائم نہ ہوسکی۔عوام غیرمعیاری اورمضرصحت اشیاء کھانے پرمجبور ،سینکڑوں لوگ وبائی امراض کا شکارہوچکے ہیں ،حکومتی اداروں نے فوڈ اتھارٹی کے قیام میں رکاوٹیں ڈالتے ہوئے مختلف قانونی پیچیدگیوں میں الجھادیا نئے سیکرٹری خوراک سے وابستہ عوام کی امیدیں بھی دم توڑ گئیں۔عوامی اورسیاسی وسماجی حلقوں نے وزیراعظم،چیف سیکرٹری آزادکشمیر سے فی الفور فوڈ اتھارٹی کوفعال کرنے کا مطالبہ کردیا۔تفصیلات کے مطابق آزادکشمیر میں فوڈاتھارٹی ایکٹ2017 منظورہونے کے باوجود تاحال فعال نہ ہوسکا دھنی سیداں میں لیبارٹری کی جگہ متعین ہونے کے باوجودلبیارٹری بھی قائم نہ کی جاسکی بیوروکریسی نے فوڈ اتھارٹی میں رکاوٹیں ڈال کراسے مختلف قانونی پیچیدگیوں میں الجھادیا ہے جس کی وجہ سے آزادکشمیر کے لوگ غیرمعیاری اشیائے خوردو نوش کھانے پر مجبور ہوچکے ہیں، تاحال فوڈاتھارٹی کا سٹاف بھی تعینات نہیں ہوسکا، یہ خدشہ ظاہر کیا جارہا ہے کہ فوڈاتھارٹی قائم نہیں ہوسکے گی ۔عوامی،سیاسی وسماجی حلقوں نے وزیراعظم راجہ فاروق حیدرخان اورچیف سیکرٹری سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ فی الفورفوڈ اتھارٹی کو فعال بنانے میں اپنا کرداراداکریں تا کہ آزادکشمیر کے لاکھوں لوگ مضرصحت اشیاء کھانے سے بچ سکیں اوران کی قیمتیں جانیں محفوظ رہیں اورغیر معیاری اشیاء فروخت کرنے والی کمپنیوں اوردکانداروں کے خلاف سخت ایکشن لیاجائے۔
فوڈاتھارٹی

© Copyright 2019. All right Reserved