بدھ‬‮   23   اکتوبر‬‮   2019

آزاد کشمیر کے تاجروں کا ظالمانہ ٹیکسوں کیخلاف اسلام آباد میں مظاہرہ


تصویرکسیاتھ
ٹیکسز ختم نہ کرنے کی صورت میں مشاورت کے بعد ملک بھرمیں شٹرڈائون احتجاج کیا جائے گا ،عبدالرزاق خان ،فاروق قادری
مذاکرات کے بعد احتجاج موخر کر دیا گیا جبکہ حکومت کی طرف سے تاجروں کیساتھ مشاورت کرنے کیلئے ایک کمیٹی تشکیل دے دی گئی
مظفرآباد(سٹی رپورٹر)مرکزی انجمن تاجران آزادکشمیر کے چیئرمین عبدالرزاق خان کی قیادت میں آزادکشمیر بھر کے تاجروں کا اسلام آباد میں ایف بی آر کے دفتر تک احتجاجی مارچ اور دھرنا ،ایف بی آر کی طرف سے تاجروں پر لگائے گئے ظالمانہ ٹیکسز کو مسترد کر دیا گیا اور ان ٹیکسز کو ختم کرنے کیلئے حکومت پاکستان کو 3دن کی مہلت دے دی گئی ٹیکسز ختم نہ کرنے پر مشاورت کے بعد آزادکشمیر بھر سمیت پاکستان میں مکمل شٹرڈائون احتجاج کیا جائے گا آزادکشمیر سے عبدالرزاق خان ،خواجہ فاروق قادری ،تنویرقریشی ،سردار وسیم خورشید ،حافظ طارق ،سردارارشاد ،راجہ رفاقت ،شہزاد اعوان ،ہارون شیخ ،پرویز زرگر،ملک معید ،مبارک شہباز اعوان ،شفیق قریشی ،راجہ اعجاز،خواجہ ناصر،عبدالرزاق ،راجہ صغیر سمیت بڑی تعداد میں تاجروں نے شرکت کی ،اور احتجاجی مارچ وکنونشن میں وفاقی حکومت سے مطالبہ کیا گیا کہ تاجروں پر لگائے گئے ظالمانہ ٹیکسز اور غیر قانونی شرائط کو ختم کی جائے ،اس موقع پر ایف بی آر کے ذمہ داران تاجروں کے پاس دھرنے میں پہنچ گئے اور مذاکرات کیے جس کے بعد تاجر قیادت نے انہیں تین دن کی مہلت دیتے ہوئے کہا کہ اگرمقررہ ڈیڈلائن تک چارٹر آف ڈیمانڈ پر عملدرآمد نہ کیا گیا تو پھر ملک بھر سمیت آزادکشمیر میں تاجروں کا مکمل شٹر ڈائون احتجاج کرینگے ،مذاکرات کے بعد احتجاج موخر کر دیا گیا جبکہ حکومت کی طرف سے تاجروں کیساتھ مشاورت کرنے کیلئے بھی ایک کمیٹی تشکیل دی گئی ہے۔
تاجر احتجاج

© Copyright 2019. All right Reserved