جمعہ‬‮   14   اگست‬‮   2020
 
 

جے یو آئی آزادی کشمیر کانفرنس تاریخ ساز ثابت ہوئی,قاری عبدالماجد


جے یو آئی آزادی کشمیر کانفرنس تاریخ ساز ثابت ہوئی,قاری عبدالماجد
حکومت نے مسئلہ کشمیر پریوٹرن لینے شروع کردیےکرفیو کے خاتمے کے لیے کوئی کردار ادا نہیں کیا
مظفرآباد(سٹاف رپورٹر)جمعیت علماء اسلام جموں وکشمیر کے ضلعی امیر مولانا قاری عبدالماجد خان نے کہا ہے کہ جے یو آئی کے زیر اہتمام مظفرآبادمیں منعقد ہونیوالی آزادی کشمیر کانفرنس تاریخ ساز ثابت ہوئی۔وزیراعظم آزادکشمیر،کمشنرمظفرآباد،ڈپٹی کمشنر،وائس چانسلر جامعہ کشمیر،ایس ایس پی مظفرآباد اورایڈمنسٹریٹر میونسپل کارپوریشن اور ان کے ماتحت آفیسران واہلکاران کے خصوصی طورپر شکر گزار ہیں جنہوں نے کانفرنس کے انعقاد کے لیے ہمارے ساتھ تعاون کیا۔گزشتہ روز سینٹرل پریس کلب میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے مولانا قاری عبدالماجد نے کہا کہ جمعیت علماء اسلام جموں وکشمیر نے خالصتاً اپنی مدد آپ کے تحت یہ کانفرنس کروائی جبکہ اس سے پہلے ہونیوالا جلسہ سرکاری وسائل استعمال کر کے کیاگیا۔ملازمین اور سکولوں کے بچوں کو زبردستی نوٹیفکیشن کر کے بلایا گیا مگر اس کے باوجود جلسہ کی تعداد جے یو آئی کے جلسے سے کم تھی۔انہوں نے کہا کہ عوام نے اب دینی طاقتوں کی طرف دیکھنا شروع کردیا ہے کیونکہ حکومت نے مسئلہ کشمیر پر جس طرح یوٹرن لینے شروع کردیئے ہیں اور کشمیر میں کرفیو کے خاتمے کے لیے کوئی کردار ادا نہیں کیا۔مولانا فضل الرحمن نے تقسیم کشمیر کے حوالے سے جن سازشوں کا تذکرہ کیا وقت آنے پر یہ سب عیاں ہوجائیں گی کیونکہ عمران خان کا یہ بیان کہ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کے خلاف جہاد کے لیے جانے والا بھی ہمارا دشمن ہوگا کے بعد عوام سمجھ چکے ہیں کہ واقعی مولانا الزام تراشی نہیں کرتے۔انہوں نے کہا کہ یونیورسٹی گرائونڈ میں ہمارے کارکنان اور عوام نے جس نظم وضبط کامظاہرہ کیا وہ قابل تحسین ہے۔پی ٹی آئی کے جلسے میں سٹی تھانہ مظفرآباد میں 81موبائل چوری ہونے کی ایف آئی آر درج کی گئی جبکہ جے یو آئی کے جلسہ میں کسی کاموبائل یا بٹوہ چوری نہیں ہوا جو اس بات کاثبوت ہے کہ دینی جماعتوں اور اداروں میں جو تربیت کا نظام ہے وہ بہت اعلیٰ ہے۔
جے یو آئی

 
© Copyright 2020. All right Reserved