ہفتہ‬‮   19   اکتوبر‬‮   2019

سندھ بلڈنگ کنٹرول میں ہونیوالی کرپشن سے متعلق تحقیقات شروع


سندھ بلڈنگ کنٹرول میں ہونیوالی کرپشن سے متعلق تحقیقات شروع
احتساب بیورو نے ڈی جی کو طلب کر لیا،7ٹاؤنز،حیدرآباد کا ریکارڈ لانیکا حکم
نیب نے غیرقانونی شادی ہالز، رفاہی پلاٹوں پر تعمیرات کی اجازت دینے پر رپورٹ طلب کرلی
کراچی (نیوز ایجنسی) قومی احتساب بیورو (نیب)نے سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی میں بڑے پیمانے پر ہونے والی کرپشن سے متعلق تحقیقات شروع کرد ی۔اس سلسلے میں قومی احتساب بیورو نے ڈائریکٹر جنرل سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کو جمعرات کو طلب کرلیا۔سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی ذرائع کے مطابق نیب نے سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی میں ہونے والی مبینہ کرپشن کے انکشاف پر معاملے کی چھان بین شروع کردی۔اس حوالے سے معلوم ہواہے کہ قومی احتساب بیورو نے ڈی جی ایس بی سی اے کو7ٹاؤنز اور حیدرآباد ریجن کا ریکارڈ کے ہمراہ پیش ہونے کا حکم دیا ہے ۔نیب نے غیرقانونی شادی ہالز، رفاہی پلاٹوں پر تعمیرات کی اجازت دینے پر رپورٹ طلب کرلی، اس کے علاوہ سال2011اور2012میں دی جانے والی ایمنسٹی اسکیم کی تفصیلات بھی طلب کی گئیں ہیں۔ذرائع نے بتایا کہ نیب حکام نے سابق ڈی جی آغا مقصود عباس، عابد شاہ اور فاروق کے حوالے سے بھی معلومات فراہم کرنے کی ہدایت کی ہے۔اس کے علاوہ کراچی کے7ٹاؤن میں کن قوانین کی تحت تعمیرات کی اجازت دی گئی؟ اس کا بھی جواب دیا جائے، ذرائع کے مطابق 10ہزارغیرقانونی تعمیرات میں فلیٹس، دکانیں اور پورشنز شامل ہیں۔نیب نے جمشیدٹاؤن، گلبرگ، لیاقت آباد، صدرٹاؤن، نارتھ ناظم آباد ٹاؤن اور اورنگی ٹاون کی بھی تفصیلات طلب کی ہیں، اور ان ٹاؤنز میں تعینات افسران کی فہرست بھی طلب کرلی گئی ہے، عمارتوں کی فہرست اور تعمیرات مکمل ہونے کاسرٹیفکیٹ اور لے آؤٹ پلان بھی طلب کیا ہے ۔
تحقیقات شروع

© Copyright 2019. All right Reserved