ہفتہ‬‮   19   اکتوبر‬‮   2019

: پنجاب,پولیس تشدد روکنے کے بجائے تھانوں میں موبائل فون کا استعمال ممنوع

سائلین اور پولیس عملے کو اپنے کیمرے والے فون گیٹ پر جمع کرانا ہوں گے،ایس ایچ او ،محرر پابندی سے استثیٰ
پولیس کسی کو غیر قانونی حراست میں رکھے گی نہ کسی شہری پر تشدد کیا جائے گا ،آئی جی پنجاب کا حکم نامہ جاری


لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک) پنجاب پولیس کی جانب سے شہریوں پر تشدد اور غیر قانونی حراست کے واقعات پر آئی جی پنجاب نے انوکھا حکم نامہ جاری کردیا۔آئی جی پنجاب عارف نواز نے پنجاب بھرکے تھانوں میں کیمرے والے موبائل فون لے جانے پر پابندی عائد کردی اور اس حوالے سے سی پی او آفس نے تمام تھانوں کو حکم نامہ جاری کردیا ہے۔آئی جی پنجاب کے حکم نامے کے مطابق عام شہری سمیت پولیس کاعملہ بھی تھانے میں اسمارٹ فون اپنے پاس نہیں رکھے گا، سائلین اور پولیس سٹیشن کے عملے کو اپنے کیمرے والے فون ڈیسک پر جمع کرانا ہوں گے تاہم ایس ایچ او اور محرر کو اس پابندی سے استثناء حاصل ہے۔حکم نامے میں کہا گیا ہےکہ پولیس کسی کو غیر قانونی حراست میں نہیں رکھے گی اور نہ کسی شہری پر تشدد کرے گی۔واضح رہےکہ پنجاب پولیس شہریوں کو حبس بے جا میں رکھنے اور ان پر تشدد کے حالیہ واقعات پر شدید تنقید کی زد میں ہے جب کہ آئی جی پنجاب کی جانب سے جاری اس حکم نامے کو بھی شہریوں نے شدید تنقید کا نشانہ بنایا ہے اور اسے پولیس کا ظلم چھپانے کے مترادف قرار دیا ہے۔
پابندی عائد











© Copyright 2019. All right Reserved