منگل‬‮   18   جون‬‮   2019

قومی اسمبلی، 9ویں اجلاس کی کارروائی32گھنٹے15منٹ پر محیط

وزیراعظم تین گھنٹے حاضر رہے،26ویں آئینی ترمیم اتفاق رائے سے منظورہوئی

اسلام آباد(ناصر نقوی سے)قومی اسمبلی کے 9ویں اجلاس کے 14دنوں کی کاروائی 32گھنٹے15منٹ پر محیط رہی:مذکورہ اجلاس میں فاٹا میں قومی و صوبائی اسمبلی کی نشستوں میں اضافےکے حوالے سے 26ویں آئینی ترمیم اتفاق رائے سے منظور کر لی گئی،انتخابات (ترمیمی) بل 2019اورہیوی انڈسٹری ٹیکسلا بورڈ(ترمیمی)بل 2019منظور کر لئے گئے،جنوبی پنجاب کو الگ صوبہ بنانے کا بل سپیشل کمیٹی جبکہ علاقہ دارالحکومت اسلام آباد گھریلو ملازمین بل 2019 اورافراد کو جبراً مذہب تبدیل کرنے سے تحفظ فراہم کرنے کا بل 2019سمیت 34بلز اور قوائد و ضوابط میں تبدیلی قائمہ کمیٹیوں کو بھجوا دیئے گئے، سری لنکا میں بم دھماکوں کے نتیجے میں انسانی جانوں کے ضیاع کے خلاف مذمتی قرارداد سمیت5قراردادیں منظور کر لی گئیں۔قومی اسمبلی کے 9ویں اجلاس کے 14دنوں کی کاروائی 32گھنٹے15منٹ پر محیط رہی،سپیکر اسد قیصر نے 21گھنٹے 19منٹ جبکہ ڈپٹی سپیکر قاسم خان سوری نے 10گھنٹے 56منٹ اجلاس کی صدارت کے فرائض سرانجام دیئے۔وزیر اعظم عمران خان نے دو دن کے دوران تین گھنٹے اجلاس میں حاضر رہے جبکہ قائد حزب اختلاف شہباز شریف بیرون ملک ہونے کی وجہ سے مذکورہ اجلاس میں شرکت نہیں کر سکے۔قومی اسمبلی کے مذکورہ اجلاس میں فاٹا میں قومی و صوبائی اسمبلی کی نشستوں میں اضافےکے حوالے سے 26آئینی ترمیم اتفاق رائے سے منظور کر لی گئی،اس آئینی ترمیم کے حق میں 288ووٹ آئے جبکہ اس کی مخالفت میں کوئی ووٹ نہیں پڑا۔اس بل پر 19اراکین اسمبلی نے ایک گھنٹہ 58منٹ بات کی جبکہ وزیر اعظم عمران خان نے بھی اس بل پر پانچ منٹ اظہار خیال کیا۔مذکورہ اجلاس میں انتخابات (ترمیمی) بل 2019اورہیوی انڈسٹری ٹیکسلا بورڈ(ترمیمی)بل 2019بھی منظور کر لیئے گئے جبکہ جنوبی پنجاب کو الگ صوبہ بنانے کا بل سپیشل کمیٹی کو بھجوا دیا گیا۔مذکورہ اجلاس میںانضباط غیر ملکی زر مبادلہ(ترمیمی) بل 2019،انسداد تطہیر زر (ترمیمی) بل 2019،نشہ آور اشیا پر قابو پانے کا (ترمیمی) بل 2019،عائلی عدالتیں (ترمیمی) بل 2019،انسداد بد عنوانی(ترمیمی) بل 2019،ایوان زراعت بل 2019،بزور طاقت مذہب تبدیل کرنے کا بل 2019،ربا کا خاتمہ بل 2019،مقام کار پر خواتین کو ہراساں کرنے سے تحفظ فراہم کرنے کا (ترمیمی) بل 2019،دستور(ترمیمی) بل 2019(آرٹیکلز 1،51،59،106،154،175الف،198اور218)،دستور(ترمیمی) بل 2019(آرٹیکلز51اور106)،زینب الرٹ،جوابی ردعمل اور بازیابی بل 2019،بچوں کی شادی کا امتناع(ترمیمی) بل 2019،دستور(ترمیمی) بل 2019( آرٹیکلز51،76اور106)،معذور افراد(ملازمت و بحالی)(ترمیمی) بل 2019،انسانی اعضاوعضلات کی پیوند کاری(ترمیمی) بل 2019، علاقہ دارالحکومت اسلام آباد امتناع جسمانی سزا بل 2019،پاکستان شہریت (ترمیمی) بل 2019،فوجداری قانون(ترمیمی) بل 2019(دفعہ489و)،مسلم عائلی قوانین (ترمیمی) بل 2019(دفعہ4)،مسلم عائلی قوانین (ترمیمی) بل 2019(دفعہ7) ،پروانہ انصرام تولیت و وراثت بل 2019،نفاذ حقوق جائیدا برائے خواتین بل 2019،تحفظ مخبر و نگران کمیشن بل 2019،مجموعہ ضابطہ دیوانی (ترمیمی) بل 2019،قانونی معاونت و انصاف اتھارٹی بل 2019، علاقہ دارالحکومت اسلام آباد گھریلو ملازمین بل 2019 ،افراد کو جبراً مذہب تبدیل کرنے سے تحفظ فراہم کرنے کا بل 2019،دستور(ترمیمی) بل 2019(آرٹیکلز51اور59)،مجموعہ ضابطہ فوجداری بل 2019 (دفعات 166الف،ب،176الف،ب،ج،د،ہ،واورز)،اسلام آباد کے علاقہ میں نجی قرضوں پر سود کی ممانعت بل 2019،یونیورسٹی آف اسلام آباد بل 2019،نیا پاکستان ہاوسنگ اتھارٹی بل 2019،پشتی رہن ضمانتوں کی بازیافت کا بل 2019 اور اذان کے بعد نماز کیلئے وقفہ کرنے کے بارے میں قومی اسمبلی کے قوائدو ضوابط میں ترمیم قائمہ کمیٹیوں کو بھجوا دیئے گئے۔ سری لنکا میں بم دھماکوں کے نتیجے میں انسانی جانوں کے ضیاع کے خلاف مذمتی قرارداد ،لیبر ڈے کے حوالے سے مزدوروں کی جدوجہد کو خراج تحسین پیش کرنے،کپاس کی برآمدات پر عائد ڈیوٹی ختم کرنے ،انتخابات (ترمیمی)آرڈیننس 2019 میں 120دنوں کی توسیع اور پاکستان میڈیکل اینڈ ڈینٹل کونسل آرڈیننس 2019 میں 120دنوں کی توسیع کے بارے میںقراردادیں منظور کر لی گئیں۔مذکورہ اجلاس میں مختلف اراکین اسمبلی نے 44نکتہ اعتراضات کے ذریعے 4گھنٹے 34منٹ اظہار خیال کیا۔
کارروائی

© Copyright 2019. All right Reserved