ہفتہ‬‮   17   اگست‬‮   2019

کوہالہ پراجیکٹ پھر التواء کا شکار ،کمپنی نے کام جاری رکھنے کیلئے پھر سخت شرائط رکھ دیں


5سال تک ٹیکس معاف کیا جائے اور کام کرنے والے افراد کی حفاظت کے حوالے سے علیحدہ تحریر لکھی جائے،کمپنی کا مطالبہ
حکومت پاکستان نے تاحال کوئی تحریری معاہدہ نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے جس سے پھر پراجیکٹ کو شروع کرنے میں وقت لگ سکتا ہے
مظفرآباد(سٹاف رپورٹر)کوہالہ ہائیڈرو پراجیکٹ ایک بار پھر سے التواء کا شکار ،وزیراعظم آزادکشمیر کی طرف سے رضا مندی کے باوجود کمپنی نے ٹیکس معاف اور پروٹیکشن کے لیے سخت شرائط رکھ دیں ،ذرائع کے مطابق ایک طویل تنازعہ کے بعد مظفرآباد ڈویژن کے عوام کی تمام خدشات کو بالائے طاق رکھ حکومت پاکستان کی ایماء پر وزیراعظم آزادکشمیر نے کوہالہ پراجیکٹ پر کام کرنے والی کمپنی کو این او سی جاری کردیا تھا تاہم باوثوق ذرائع نے بتایا کہ اب یہی کمپنی جس کا دفتر اسلام آباد کے ایک بڑے نجی ہوٹل میں ہے کو تاحال نہیں کھول رہی اب کمپنی نے موقف اختیار کیا ہے کہ 5سال تک ہمیں ٹیکس معاف کیا جائے اور موقع پر کام کرنے والے افراد کی پروٹیکشن کے حوالے سے علیحدہ تحریر لکھی جائے ۔ذرائع کے مطابق حکومت پاکستان نے اس حوالے سے تاحال کوئی تحریری معاہدہ نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے جس سے ایک بار پھر کوہالہ پراجیکٹ کو شروع کرنے میں وقت لگ سکتا ہے ۔مظفرآباد کی عوام کا کہنا ہے کہ رمضان میں جس طرح سول سوسائٹی ،وکلاء،تاجر،طلباء تنظیموں کے اراکین دھرنا دے کر بیٹھے ہیں اس کا اثر کہیں تو ہوگا۔ماہ مقدس میں یہ لوگ اپنا سب کچھ چھوڑ کر دھرتی کو خشک سالی سے بچانے کے لیے بیٹھے ہیں۔
کمپنی مطالبہ

© Copyright 2019. All right Reserved