ہفتہ‬‮   21   ستمبر‬‮   2019

گھروں کی تعمیر کا عمل قبائلی اضلاع سے شروع کیاجائے،ٹرائبل یوتھ آرگنائزیشن کی باجوڑ میں گول میز کانفرنس

قبائلی اضلاع میں موجودمعدنیات کیلئے کارخانے قائم اور فوری طور پر دفعہ 144 کوختم کیاجائے
انضمام کیلئے جو روٹ میپ تیار کیا گیا تھا اس پر عملدرآمد نہیں ہوا،مولانا وحید گل،سید اخونزادہ چٹان ودیگر کاخطاب
 باجوڑ(نمائندہ خصوصی) ٹرائبل یوتھ آرگنائزیشن کے زیر اہتمام باجوڑ میں گول میز کانفرنس کا انعقادتفصیلات کے مطابق ٹرائبل یوتھ آرگنائزیشن کے زیر اہتمام ہیڈکوارٹر خار میں فاٹا انضمام کے بعد قبائلی اضلاع کے صورتحال اور آئندہ کے لائحہ عمل کیلئے گول میز کانفرنس کا انعقاد کیااس موقع پر ٹرائبل یوتھ آرگنائزیشن کے صدر فرہاد علی ، سابق رکن قومی اسمبلی شہاب الدین خان ، سابق رکن قومی اسمبلی سید اخونزادہ چٹان ، عوامی نیشنل پارٹی کے سابقہ ضلعی صدر شیخ جہانزادہ ، پاکستان تحریک انصاف باجوڑ کے صدر ڈاکٹر خلیل الرحمٰن ، عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری شاہ نصیر خان ، باجوڑ سیاسی اتحاد کے صدر مولانا وحید گل ، باجوڑ چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے بانی چیئرمین لعلی شاہ پختونیار ، پی ایچ ڈی سکالر ڈاکٹر علم خان ، ٹرائبل یوتھ جرگہ کے ایگزیگٹیو ممبرنثار باز، یوتھ آف باجوڑ کے ممبران اور باجوڑ جرگہ ممبران کے علاوہ بی بی بی سے کے نمائندہ ہارون رشید ، ڈاکٹر اشرف ، لعل شاہ سمیت دیگر مقررین نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ قبائلی اضلاع میں موجود معدنیات کیلئے مقامی علاقوں میں کارخانے قائم کیے جائیں تاکہ اس کا فائدہ مقامی لوگوں کو حاصل ہو۔مقررین نے اس موقع پر ضلعی انتظامیہ سے مطالبہ کیا کہ فوری طور پر لگایا گیا دفعہ 144ختم کیا جائے۔ مقررین نے کہا کہ پی ٹی آئی حکومت نے سرکاری گھروں کے تعمیر کا جو اعلان کررکھا ہے اس کی شروعات قبائلی اضلاع سے کی جائے جماعت اسلامی کے مولانا وحید گل نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے اس طرح کے انضمام کا مطالبہ نہیں کیا تھا کیونکہ ہمارا مقصد تھا کہ اس سے غریبوں کو انصاف ملے گا لیکن جو رخ انضمام پیش کیا جارہا ہے اس سے تو عوام کو انضمام کے نام سے متنفر کیا جا رہا ہے۔ سید اخونزادہ چٹان نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ انضمام کے بعد میں مایوسی پھیل گئی ہے اس کی وجہ یہ ہے کہ انضمام کیلئے جو روٹ میپ تیار کیا گیا تھا اس پر عمل نہیں درآمد کیا گیا۔
گول میز کانفرنس

© Copyright 2019. All right Reserved